Ghazal

Ghazal

کی ہر اک سے وفا مسلسل
ملی  پھربھی اک سزا مسلسل
نظرسے ملا بیٹھے نظر اک بار
وہ اسی دن سے ہیں خفا مسلسل
ہے پردے میں رہنا ضد ان کی
ادھر دیدار کا تقاضا مسلسل
زلف چوم رہی ھے گلاب چہرہ
مارے جاتی ھے یہ ادا مسلسل
وہ ستم گر ڈھا ئے ستم مسلسل
ہم بھی دیئے جائیں دعا مسلسل
دل نے اسے بارہا سمجھایا مگر
اس کو دیکھتی جائے نگاہ مسلسل
مرض ہوا تو ضرور آرام آئے گا
کر رہے ہیں عشق کی دوا مسلسل
ضرور اس کی زلفیں کھلی ہوں گی
معطر ہے صبح سے ہوا مسلسل
اک ہجوم میں رہ کر بھی یوں لگا
جیسے چل رہا ہوں تنہا مسلسل
چلو اب کوئی دیپ جلا لیں
چھا رہا ھے اندھیرا مسلسل
ظلم تو آخر مٹے گا ہی ’شاہیں‘
مہلت دے رہا ہے خدا مسلسل

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s