Qitaha

آپ کہتے ہیں تو زنجیر ہلا دیتے ہیں

دل لگانے کی مجھ کو یوں سزا دیتے ہیں
میرے سبھی خط شاہیں اب جلا دیتے ہیں
میں یہ کہتا ہوں کہ چپ چاپ گزر جائیں اب
آپ کہتے ہیں تو زنجیر ہلا دیتے ہیں

شکوہ نہ ہی کر تو بہتر ہو گا دل ناداں
لوگ شکایت کرنے کی سزا دیتے ہیں
کون سنے گا اب روداد مظلوم کی
آ پ کہتے ہیں تو زنجیر ہلا دیتے ہیں

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s