Nazam

وقت کے ساحل پہ

وقت کے ساحل پہ
یہ کیسی لہر اٹھی
دستور سارے
اصول سبھی
بدل گئے
جگنو! ہیں تلاش میں
اب روشنی کی
تتلیاں ترس گئی
معصوم ہاتھوں کو
پروانے کو ڈھونڈ تی ہے
شمع رات بھر
خوشبو متلاشی ھے
پھولوں کی نگر نگر
برف کی لمس
ہاتھ جلا دے
آگ کا شعلہ
سرد ہوتا جائے
فصل بہار میں
پتے سارے زرد ہیں
امن کے پجاری سارے
دہشت گرد ہیں
سب کچھ تو ٹھیک تھا
یکدم یہ کیا ہو گیا
جاگنے کا وقت آیا تو
شہر سارا سو گیا

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s