Ghazal

جب گرا تو کو ئی اٹھانے نہ آ یا
جب روٹھا تو کوئی منا نے نہ آ یا
وعدہ تو کیا تھا اس نے کچھ سوچ کر ہی
جب ضرورت تھی وہ نبھانے نہ آیا
بے وفا پر لکھی تھی اس نے غزل جو
جب لگی محفل تو سنانے نہ آیا
اک قرض جو تھا اس پہ میری وفا کا
وہ قرض بھی تو اب چکانے نہ آیا
میرا دل وہ غیروں سے مل کر دکھاتا
اب کبھی وہ دل بھی دکھانے نہ آیا
روز آتا تھا مجھ سے ملنے وہ شاہیں
پھر کبھی وہ ملنے ملانے نہ آیا

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s