Ghazal

Ghazal

سیلاب میرے گائوں میں آیا تھا اور بس
سب کچھ ہی بہہ گیا جو کمایا تھا اور بس
میں نے سبھی وہ آہ و بکا سن تو لی ہی تھی
بزدل ہوں میں, سو خود کو بچایا تھا اور بس
بدنام کروا ئے گا کسی روز دل مجھے
بے پردہ وہ نظر ابھی آیا تھا اور بس
محشر میں اب ملیں گے خدا نے جو چاہا تو
اس نے فقط مجھے یہ بتایا تھا اور بس
میرا وجود پگھلا ہے جو موم کی طرح
اس عشق کو ہی ہاتھ لگایا تھا اور بس

شا ہین میرے   دل میں محبت  بسی رہی
“اک شخص میرے خواب میں آیا تھا اور بس”

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s