Ghazal

اس کو فقط لبھائے گی ہر جا صدائے گل
بلبل نے اور کچھ نہیں دیکھا سوائے گل
جس روز چمن اجڑا تھا مالی کی شہہ سے
آتی تھی یہ صدا کہیں سے ہائے ہائے گل

تم لوٹ آنا جب کبھی جی چاہے ملنے کو
میں منتظر رہوں گا تمہارا سجائے گل
اتنی سی بات پہ وہ خفا مجھ سے ہو گئے
بس پوچھا تھا خزاں میں کہاں سے ہو لائے گل
اب اور اس خدا سے کیا مانگنا مجھے
اس دور میں بھی خود ہی مرے در پہ آئے گل

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s