Ghazal

Ghazal,

لوٹ بھی آئو رات اندھیری ہے
مان بھی جائو رات اندھیری ہے

منتظر تیری اک نظر کے ہیں
جام چھلکائو رات اندھیری ہے

رستہ دشوار , انجاں ہے منزل
مجھ کو سمجھائو رات اندھیری ہے

آج شب تو گزار لینے دے
اس کو بتلا ئو رات اندھیری ہے

پہلو میں آ کے بیٹھ جائو نا !!
اب نہ شر ما ئو رات اندھیری ہے

کن خیالوں میں بیٹھے ہو چپ چا پ
کچھ تو فر ما ئو رات اندھیری ہے

با د لوں کا ابھی بھروسہ نہیں
اس کو سمجھا ئو رات اندھیری ہے

جو ہوا ٹھیک تو نہیں مگر اب
بھول بھی جا ئو رات اندھیری ہے

آج یاں کون آئے گا شاہیں
تم نہ گھبرا ئو رات اندھیری ہے

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s