Uncategorized

Punjabi

میں قائم مثال کر گیا واں
ہجر دے صدمے جر گیا واں
تو ں ایڈا وڈا کھلاڑی کوئی نہیہ
میں جان کے ای ہر گیا واں
ادھ وچھکار ڈب جانا سی
لکڑ دے سنگ تر گیا واں
پوہ دے پالے نیڑے نہیہ آئے
ہاڑ دے وچ ٹھر گیا واں
ہن کدی مر نہیہ سکدا
وچ حیاتی جو مر گیا واں

Advertisements
Uncategorized

لبوں سے آج یوں ٹکرائے وہ لب
مچا ہے شور ہائے ہائے وہ لب

نگاہیں ، زلفیں اور رخسار تھے واں
قیامت ہو گئی جب لائے وہ لب

مجھے دیکھے سے کچھ تو یاد آیا
نگاہیں وہ جھکیں شرمائے وہ لب

Punjabi

آپے کیتی گل بات بھل جاندے نیں
بندے اپنی اوقات بھل جاندے نیں
شہر دے چانن وچ پئے جان والے
پنڈ دی چاننی رات بھل جاندے نیں
پیزے برگر جہی خوراک تے لگ کے
ددھ مکھن جہی سوغات بھل جاندے نیں
جد سکھ ہون چار چوفیرے ، فر اقبال
دکھیاں دے حالات بھل جاندے نیں

Uncategorized

میں اللہ کو سب بتاؤں گی

“میں اللہ کو جا کر سب بتاؤں گی” دل دہلا دینے والے یہ الفاظ تھے شام میں شہید ہونے والی ایک معصوم بچی کے. سوچ رہا ہوں کہ اللہ کو وہ کیا بتائے گی ، یہ کہ ظالموں نے ہمارا سب کچھ تباہ کر دیا؟ یہ کہ ہمارا خون پانی کی طرح بہایا گیا؟ یہ کہ ہم پہ آگ برسائی گئی؟ کس نے کیا یہ سب؟ دشمنوں نے، اپنے کدھر تھے؟ وہ کرکٹ کے جنون میں پاگل تھے، وہ سری دیوی کی موت پہ آنسو بہا رہے تھے، ان کو اپنی اپنی سیاست بچانے کی پڑی تھی، میڈیا میں کوئی خبر تک نہ چلنے دی گئی کہ کہیں کوئی لاچار بیٹھ کر بے بسی کے دو آنسو نہ بہا لے، .
سمجھ نہیں آتی اس کو بے غیرتی کہا جائے یا بے حسی. کیا مسلمان ایک جسم کی مانند نہیں ہیں؟ کیا جسم کے ایک حصے کا درد پورے جسم میں محسوس نہیں ہوتا؟ کیا ہم مسلمان نہیں رہے؟ یا شام والے مسلمان نہیں ہیں؟ کیا ہمیں یہی کہہ کر ڈرایا جاتا رہے گا کہ ہم کمزور قوم ہیں اس وقت؟ تو کیا کبوتر کی طرح آنکھیں بند کرنے سے ہم بچ پائیں گے؟ نہیں ، کبھی نہیں . شام کی تباہی کے بعد سب کی باری آنے والی ہے .
دوسری بات جس کو مسلمان کے درد کا احساس نہیں اس کے اسلام کی اللہ کو کوئی ضرورت نہیں ہے. سیاست دانوں اور جرنیلوں سے لے کر دانشوروں اور مذہبی رہنماؤں تک ہر کسی کو اپنی پڑی ہے، میڈیا کی تو بات ہی چھوڑو . عوام کو بھی کچھ ہوش کرنے کی ضرورت ہے.
ان بچیوں کو شاید یہ بھی پتا ہو کہ پاکستان اسلامی دنیا کی دفاعی لحاظ سے سب سے بڑی قوت ہے، شاید وہ انتظار کرتی رہی ہوں کہ اور کوئی آیا یا نہ پاکستانی ضرور آیئں گے مگر ان کو کیا پتا کہ ادھر تو دن رات بے غیرتی کا پانی پلا کر صلاح الدین اور بن قاسم کی روح کو مار دیا گیا ہے.
بہر حال یہ سب باتیں وہ بچی اللہ کو بتائے گی. پھر شاید اس وقت ہمارے پاس ندامت کے سوا کوئی جواب نہ ہو!
اقبال شاہین